لاہور ۔ پاکستان کرکٹ بورڈ کی سلیکشن کمیٹی کے رکن سلیم جعفر نے کرکٹ سے نا بلند پلیئر اورنامور کمنٹیٹر وسابق ٹیسٹ کرکٹ رمیز راجہ کے بیٹے حیدر رمیز راجہ کو دباؤ میں آکرلاہور ویسٹ زو ن کی ٹیم میں منتخب کر لیا ہے .

سفارشی بھرتی پرجہاں ایک طرف مقتدر حلقو ں میں سخت بے چینی پھیل گئی ہے وہیں دوسری طرف رمیز راجہ جو کہ وقتا فوقتا ٹیم منیجمنٹ کو میرٹ پر بھرتیاں نہ کرنے پر تنقید کا نشانہ بناتے ہیں، کی شخصیت بھی متنازعہ ہو گئی ہے۔۔

پی سی بی کے ذمہ دار ذرائع کے مطابق 25سالہ حیدر رمیز راجہ کی لاہور کی جانب سے ڈومیسٹک سطح اور کلب کرکٹ کی سطح پر کوئی پرفارمنس نہیں ہے اور وہ ماڈل ٹاون کرکٹ کلب کی نمائندگی کرتے ہیں جہاں انہیں کلب کرکٹ ٹورنامنٹس میں کھیلنے کا چانس کم ہی ملتا ہے ۔

ذرائع کا کہنا تھا کہ پی سی بی کے زیر اہتمام ہونیوالی سینئر انٹرڈسٹرکٹ کرکٹ ٹورنامنٹ کیلئے لاہور کے تینوں زونز کی ٹیموں کے چناؤ کیلئے ٹرائلز پی سی بی کے سلیکٹر سلیم جعفر نے لئے جنہوں نے ٹرائلز لاہور ریجن کے کوچ محسن کمال کی سفارش پر رمیز راجہ کے بیٹے کو دیگر اہل کرکٹرز پر فوقیت دیتے ہوئے لاہور ویسٹ زو ن کی ٹیم میں منتخب کر لیا اور موقف اختیار کیا کہ ان پر بہت دبائو تھا ۔

ذرائع کا کہنا تھا کہ لاہور ویسٹ زون کی ٹیم میں سفارتی کھلاڑی کی بھرتی پر مقتدر حلقوں میں شدید بے چینی پائی جا رہی ہے اور کئی سوالات جنم لے رہے ہیں کہ اگر سلیم جعفر لاہور ویسٹ زو ن کی ٹیم میں میرٹ کیخلاف اور سفارش پر کھلاڑی کو ٹیم میں شامل کروا سکتے ہیں تو دیگر زونز کا کیا حال ہو گا؟

جس کے باعث ٹیم کے چناؤ پر انگلیاں اٹھنا شروع ہو گئیں ہیں اور سلیم جعفر کی شخصیت بھی متنازعہ ہو گئی ہے ۔

واضح رہے کہ رمیز راجہ وسیم راجہ کے چھوٹے بھائی ہیں جن کے لاہور ریجن کے کوچ محسن کمال اور پی سی بی کے سلیکٹر سلیم جعفر کیساتھ دیرینہ تعلقات بھی ہیں ۔